Jadid Khabar

نکسلیوں کے حملے میں 9جوان شہید

Thumb

سکما،13مارچ (یواین آئی)چھتیس گڑھ کے سکما ضلع کے کرسٹارام تھانہ علاقہ میں آج نکسلیوں نے بارودی سرنگ کا دھماکہ کرکے اینٹی لینڈ مائن وھیکل کو اڑادیا ،جس میں سنٹرل ریزرو پولیس فورس(سی آر پی ایف ) کے 9جوان شہید اور دو زخمی ہوگئے ۔پولیس ذرائع کے مطابق سکماضلع ہیڈکوارٹر سے تقریبا 60کلومیٹر دور دوپہر کو نکسلیوں نے اس واقعہ کو انجام دیا ۔اس واقعہ کے بعد دونوں طرف سے فائرنگ بھی ہوئی ۔بعد میں نکسلی گھنے جنگل میں بھاگ گئے ۔زخمیوں کو کرسٹارام میں ابتدائی علاج کے بعد ہیلی کاپٹر سے رائے پور بھیجا گیا ہے ۔نکسلی شہید جوانوں کے ہتھیاربھی لے گئے ۔ذرائع کے مطابق کرسٹارام تھانہ سے سی آرپی ایف کی 212ویں بٹالین کے جوان اینٹی لینڈمائن وھیکل میں سوارہوکر سڑک کی تعمیر میں مصروف مزدوروں کی سکیورٹی کے لئے پالودی گاؤں کی طرف جارہے تھے ۔جنگل میں گھات لگاکر بیٹھے نکسلیوں نے گاڑی کونشانہ بناکر بارودی سرنگ کا دھماکہ کردیا۔دھماکہ اتنا طاقت ورتھا کہ گاڑی کے پرخچے اڑگئے اور اس میں سوار 8جوان موقع پر ہی شہید ہوگئے ۔ایک دیگر کی علاج کے دوران موت ہوگئی ۔دودیگر جوانوں کا علاج جاری ہے ۔دھماکہ کے بعد نکسلیوں نے فائرنگ شروع کردی ۔جواب میں موقع پر موجود دیگر جوانوں نے بھی مورچہ سنبھالا ۔کچھ دیر تک چلے تصادم کے بعد نکسلی بھاگ گئے ۔دریں اثنا جائے وقوع پر مزید کمک بھیجی گئی ہے ۔بسترکے انسپکٹر جنرل آف پولیس ویویکا نند سنہا نے کہا کہ زخمی جوانوں کے بہترعلاج پر توجہ دی جارہی ہے ۔
دریں اثناء مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے چھتیس گڑھ کے سکما ضلع میں نکسلیوں کے حملے میں شہید ہوئے سی آر پی ایف کے جوانوں کی بہادری کو سلام کیا اور ان کے اہل خانہ کے تئیں تعزیت کا اظہار کیا۔وزیر داخلہ نے سی آر پی ایف کے ڈائریکٹر جنرل سے بات کرکے ملے کے بارے میں معلومات حاصل کی اور انہیں صورت حال کا جائزہ لینے کے لئے چھتیس گڑھ جانے کے لئے کہا ہے ۔ نکسلیوں کے بارودی سرنگ کے حملے میں 9جوان شہید ہوگئے اور دو دیگر زخمی ہوئے ہیں۔مسٹر سنگھ نے سوشل میڈیا پر اپنے ٹوئٹ میں لکھا ہے سکما کا واقعہ افسوس ناک ہے ۔ میں وطن کی خدمت کرتے ہوئے شہید ہونے والے ہر جوان کو سلام کرتا ہوں۔ میں شہیدوں کے گھر والوں کے تئیں تعزیت کا اظہار کرتا ہوں اور زخمیوں کی جلد صحت یابی کی دعا کرتا ہوں۔ میں نے سی آر پی ایف کے ڈائریکٹر جنرل سے بات کی ہے اور ان سے چھتیس گڑھ کے لئے روانہ ہونے کو کہا ہے ۔چھتیس گڑھ کے سکما ضلع کے کرسٹا رام تھانہ علاقے میںآج نکسلیوں نے بارودی سرنگ کے دھماکہ کے ذریعہ سی آر پی ایف کے ایک اینٹی لینڈ مائنس گاڑی کو اڑا دیا ۔ا س دھماکہ میں 9جوان شہید ہوگئے او ردو دیگر زخمی ہوئے ۔واردات کو انجام دے کر نکسلی جنگل میں فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے ۔
کانگریس صدر راہل گاندھی نے چھتیس گڑھ کے سکما میں نکسلی حملے میں جوانوں کی شہادت پر رنج و غم کا اظہار کرتے ہوئے آج کہا کہ اس واقعہ نے داخلی سلامتی پر مودی حکومت کی پالیسیوں اور دعوؤ ں کی قلعی کھول دی ہے ۔ مسٹر راہل گاندھی نے الزام لگایا کہ داخلی سلامتی کے تعلق سے مودی حکومت کی پالیسیاں ناقص ہیں اور اس حملے نے بی جے پی حکومت کی پالیسیوں اور دعوؤں کی پول کھول دی ہے ۔ انہوں نے نکسلی حملے میں شہید جوانوں کے اہل خانہ کے تئیں تعزیت کا اظہار کیا اور زخمیوں کی جلد صحت یاب ہونے کی تمنا کی۔  انہوں نے ٹویٹ کیا کہ "چھتیس گڑھ کے سکما میں نکسلی حملے میں سینٹرل ریزرو پولس فورس (سی آر پی ایف) کے نو جوان شہید ہوئے ہیں۔ اس سے داخلی سلامتی پر حکومت کی ناقص پالیسیوں کا پردہ فاش ہوگیا ہے "۔  بعد میں کانگریس میڈیا انچارج رندیپ سنگھ سورجے والا نے ایک بیان جاری کر کے الزام لگایا کہ قومی سلامتی پر مودی حکومت کی بے سمت پالیسیوں کی وجہ سے ملک کے اندر اور سرحد پر صورتحال خراب ہے ۔ اس واقعہ سے نکسلزم پر لگام کسنے کے مودی حکومت کے دعوے کی بھی پول کھل گئی ہے ۔ مسٹر رندیپ سنگھ سورجے والا نے کہا کہ چار سال پہلے مسٹر مودی نے قومی سلامتی کو ایشو بنایا تھا اور اسی کا سہارا لے کر اقتدار حاصل کیا تھا۔ ان چار سالوں کے دوران سرحد پر جنگ بندی کی خلاف ورزی ، در اندازی ، سلامتی کی تنصیبات پر دہشت گردانہ حملے اور نکسلی حملے کئی گنا بڑھ گئے ہیں۔انہوں نے کہا کہ مودی حکومت کے نوٹ بندي کے فیصلے کے بعد ملک میں 23 بڑے نکسلی حملے ہوئے ہیں جن میں سلامتی دستہ کے 97 جوان شہید ہوئے ہیں اور 121 شہری ہلاک ہو ئے ہیں۔ اسی طرح سے نوٹ بندي کے بعد صرف جموں و کشمیر میں 53 بڑے دہشت گردانہ حملہ ہوئے ہیں جن میں 99 جوان شہید ہو گئے اور 64 شہری ہلاک ہو ئے ہیں۔کانگریس کے ترجمان نے چھتیس گڑھ حکومت کی بھی تنقید کی اور کہا کہ ریاست میں وزیر اعلی رمن سنگھ کی قیادت والي 14 سال اور 95 دنوں کی بی جے پی حکومت نکسلزم پر لگام کسنے میں ناکام رہی ہے ۔ ریاست میں مسلسل نکسلی حملے ہو رہے ہیں۔ وزیر اعلی نے نکسلیوں کے خلاف سخت اقدامات کرنے کی بات کی ہے لیکن اس سمت میں کوئی ٹھوس پہل نہیں کی گئی ہے ۔انہوں نے کہا کہ گزشتہ سال نکسل باڑی سے پارٹی کے توسیع کا پروگرام شروع کرنے والے بی جے پی صدر امت شاہ کو وزیر اعظم کے ساتھ مل کر نکسلزم ختم کرنے کے لئے ٹھوس اقدامات کرنے چاہئے ۔ 

Ads