Jadid Khabar

معروف صحافی ونود دعا کا انتقال

Thumb

نئی دہلی، 4 دسمبر (یو این آئی) معروف صحافی ونود دعا کا ہفتہ کو یہاں اپولو اسپتال میں انتقال ہوگیا۔

ان کی عمر 67 برس تھی۔ ان کے خاندان میں دو بیٹیاں ہیں۔
مسٹر دعا کی بیٹی ملیکا دعا نے بتایا کہ ان کے والد کی شام تقریباً 4.30 بجے موت ہوگئی۔
ان کی تدفین کل سہ پہر یہاں لودھی قبرستان میں کی جائے گی۔
مسٹر دعا، جنہیں جگر کے انفیکشن کی وجہ سے کچھ دن پہلے پرمانند اسپتال میں داخل کرایا گیا تھا، گزشتہ پانچ دنوں سے اپولو اسپتال کے آئی سی یو میں زیر علاج تھے۔ مسٹر دعا مئی میں کورونا وائرس سے متاثر ہوئے تھے۔ اس کے بعد سے ان کی صحت مسلسل گر رہی ہے۔ ان کی اہلیہ چینا دعا کا انتقال 11 جون کو کوویڈ 19 کے انفیکشن کی وجہ سے ہوا تھا۔
ایک خوش مزاج اور زندہ دل صحافی، جناب دعا ملک کے ٹیلی ویژن صحافیوں کی پہلی نسل کے معروف ناموں میں سے ایک تھے۔ انہوں نے دوردرشن، این ڈی ٹی وی اور سہارا نیوز چینل میں کام کیا۔ انہیں 1996 میں رام ناتھ گوئنکا جرنلزم ایوارڈ سے نوازا گیا اور وہ یہ اعزاز حاصل کرنے والے پہلے ٹی وی صحافی تھے۔ انہیں 2008 میں منموہن سنگھ حکومت کے دور میں پدم شری سے نوازا گیا تھا۔
جناب دعا نے ڈاکٹر پرنو رائے، بانی، این ڈی ٹی وی کے ساتھ، دوردرشن پر ایک طویل انتخابی تجزیہ پروگرام پیش کیا۔ 1985 میں حکومت کے وزراء سے براہ راست سوالات کا پروگرام 'جن وانی ' پیش کیا ۔
جناب دعا 11 مارچ 1954 کو پیدا ہوئے۔ ان کا خاندان تقسیم ہند کے وقت پاکستان کے ڈیرہ اسماعیل خان سے دہلی آیا تھا۔ انہوں نے دہلی کے ہنس راج کالج سے گریجویشن مکمل کی اور دہلی یونیورسٹی سے انگریزی ادب میں ایم اے کی ڈگری حاصل کی۔ وہ نکڑ ناٹک گروپ کے ایک فعال رکن تھے۔

Ads