Jadid Khabar

سماجوادی پارٹی اور بی ایس پی کے درمیان اتحاد کا اعلان آج

Thumb

لکھنؤ، 11 جنوری (یو این آئی) بہوجن سماج پارٹی (بی ایس پی) اور سماج وادی پارٹی (ایس پی) اور کئی دیگر چھوٹی پارٹیوں کے درمیان مہاگٹھ بندھن کا اعلان سنیچر کو یہاں کیا جائے گا۔15 جنوری کو پریاگ راج میں کنبھ میلے میں پہلا شاہی اسنان ہوگا۔ اسی دن بی ایس پی سربراہ مایاوتی اور ایس پی سربراہ اکھلیش یادو کی اہلیہ ڈمپل یادو اپنی سالگرہ منائیں گی۔ دونوں بڑی پارٹیوں بی ایس پی اور ایس پی کے لیڈروں نے سنیچر کو لکھنؤ میں مشترکہ نامہ نگاروں کی کانفرنس بلایا یا جس میں محترمہ مایاوتی اور اکھلیش یادو موجود رہیں گے ۔ امید کی جارہی ہے کہ دونوں لیڈر مہاگٹھ بندھن کا اعلان کریں گے ۔ایس پی کے قومی سکریٹری راجندر چودھری اور بی ایس پی کے سکریٹری جنرل ستیش چندرا نے مشترکہ بیان جاری کرکے یہاں بتایا کہ نامہ نگاروں کی کانفرنس کو ایس پی صدر اکھلیش یادو اور بی ایس پی سربراہ محترمہ مایاوتی خطاب کریں گی۔اس سے پہلے دونوں پارٹیوں کے لیڈران جمعہ کی شام لکھنؤ میں ملاقات کریں گے ۔ محترمہ مایاوتی نئی دہلی سے جمعرات کی شام کو یہاں پہنچ گئی ہیں جبکہ مسٹر اکھلیش یادو جمعہ دوپہر میں ٹوئٹر کے ذریعہ قنوج میں ای۔چوپال میں حصہ لیں گے ۔مسٹر اکھلیش یادو نے کہا کہ اب ٹوئٹر کے ذریعہ گاؤں والوں کو ڈیجیٹل دنیا سے جوڑنے کی ضرورت ہے ۔ اس کی شروعات قنوج کے فقیر پور گاؤں سے کی گئی ہے ۔ایس پی صدر نے کہا کہ وزیراعظم نریندر مودی کہتے تھے کہ ملک میں سبھی سلاٹر ہاؤس بند کردیئے جائیں گے ۔ اس وقت ایسا لگتا ہے کہ سبھی سلاٹر ہاؤس سماج وادی پارٹی کے لیڈروں کے ہیں لیکن اس میں بی جے پی کے لیڈر بھی شامل تھے ۔ ریاستی حکومت نے گائے کی حفاظت کے لئے شراب پر مزید ٹیکس لگادیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کام دھینو اسکیم اس لئے شروع کی گئی تھی جس سے ریاست میں دودھ کی پیداوار بڑھ جائے لیکن اب جن لوگوں نے بینک سے قرض لیا اب وہ قسط بھی نہیں دے پارہے ہوں گے ۔انہوں نے کہا کہ جب ہماری حکومت آئے گی تو ہم اس اسکیم کے تحت لئے گئے قرض کا سارا سود معاف کردیں گے ۔مسٹر یادو نے کہا کہ گنگا صفائی کے سلسلے میں حکومت کی نیت صاف نہیں ہے ۔ جب تک نیت صاف نہیں ہوگی گنگا صاف نہیں ہوگی۔اس موقع پر اترپردیش کے سابق وزیراعلی کے ساتھ اسٹیج پر ڈمپل یادو اور ٹوئٹر انڈیا کے گلوبل نائب صدر کالن کراویل بھی موجود تھے ۔
دریں اثناء سماج وادی پارٹی (ایس پی) صدر اکھلیش یادو نے اپنی اہلیہ ڈمپل یادو کے پارلیمانی حلقہ اور عطر نگری قنوج سے لوک سبھا انتخابات کی مہم کا آغاز کرتے ہوئے کہا کہ ‘‘ایس پی اور بہوجن سماج پارٹی (بی ایس پی) کے ایک ساتھ آجانے سے بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے ساتھ ہی کانگریس بھی خوفزدہ ہے ۔’’مسٹر یادو نے جمعہ کو یہاں ای۔چوپال میں کہا کہ سنیچر کو لکھنؤ میں ایس پی اور بی ایس پی کی مشترکہ پریس کانفرنس ہوگی۔ ہمارے ساتھ آنے پر بی جے پی کے ساتھ کانگریس بھی اندر سے کافی خوف زدہ ہے ۔ایس پی صدر نے کہا کہ لوک سبھا انتخابات ہمارے سامنے ہے ۔ سماج وادی حکومت نے اپنے دور اقتدار میں کئی ترقیاتی اسکیمیں چلائی تھیں جس سے ریاست کی غریب عوام کو فائدہ مل رہاتھا۔ بی جے پی نے کئی اسکیموں کو اپنے نام کرلیا ہے ۔انہوںنے کہا کہ لوک سبھا انتخابات میں ہمارا نعرہ ہوگا ‘‘ہمارا کام بولتا ہے بی جے پی کا دھوکہ’۔ انہوں نے کہا کہ ہم لوگوں کو اب افواہ پھیلانے والوں سے ہوشیار رہنے کی ضرورت ہے ۔ افواہ پھیلانے یعنی بی جے پی کے لوگوں سے بچ کے رہنا ہوگا۔ ہم کو ترقی کرنی ہے تو ذات پات کی باتیں چھوڑنی ہوگی۔مسٹر اکھلیش یادو نے کہا کہ بی جے پی حکومت لوگوں کو ہر سطح پر گمراہ کررہی ہے ۔ وزیراعلی یوگی آدتیہ ناتھ نے ریاست میں شراب میں اضافہ کرنے پر زور دے رہی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ بی ایس پی کے ساتھ لکھنؤ میں مہا گٹھ بندھن کا اعلان ہوگا۔ علاقائی پارٹیوں کے ساتھ اتحاد کرکے بی جے پی مضبوط ہوئی ہے ۔ اب ہم بھی اتحاد کرکے اپنی طاقت میں اضافہ کررہے ہیں۔چوپال میں سی بی آئی کے ذریعہ تفتیش کرنے پر بولتے ہوئی انہوں نے کہا ان سے جوکچھ بھی تفتیش کرنی ہے وہ انتخابات کے بعد کرے ۔ ایس پی اور بی ایس پی جب پہلے ساتھ آئے تو اترپردیش میں بی جے پی وزیراعلی اور نائب وزیراعلی کے پارلیمانی حلقہ کے ضمنی انتخابات ہار گئے ۔ اب یہی طاقتیں لوک سبھا انتخابات میں بھی پرچم لہرائے گی۔مسٹر یادو نے کہا کہ اب ٹوئٹر کے ذریعہ گاؤں والوں کو ڈیجیٹل دنیا سے جوڑنے کی ضرورت ہے ۔ اس کی ابتدا قنوج کے فقیر پور گاؤں سے ہوئی ہے ۔ایس پی صدر نے کہاکہ وزیراعظم نریندر مودی کہتے تھے کہ ملک میں سبھی سلاٹر ہاؤس بند کردیئے جائیں گے ۔ اس وقت ایسا لگتا ہے کہ سبھی سلاٹر ہاؤس سماج وادی پارٹی کے لیڈروں کے ہیں لیکن اس میں بی جے پی کے لیڈر بھی شامل تھے ۔ریاستی حکومت نے گائے کی سلامتی کے نام پر شراب پر مزید ٹیکس لگادیا گیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کام دھینو اسکیم اس لئے شروع کی گئی تھی جس سے ریاست میں دودھ کی پیداوار میں اضافہ ہو لیکن اب جن لوگوں نے بینک سے قرض لیا وہ قسط بھی نہیں اد ا کرپارہے ہوں گے ۔سابق وزیراعلی اکھلیش یادو نے کہا کہ جب ہماری حکومت آئے گی تو اس اسکیم کے تحت لئے گئے قرض کا سارا سود معاف کردیا جائے گا۔مسٹر اکھلیش یادو نے کہاکہ گنگا کی صفائی کے سلسلے میں حکومت کی نیت صاف نہیں ہے ۔ جب تک نیت صاف نہیں ہوگی گنگا صاف نہیں ہوگی۔اس موقع پر اترپردیش کے سابق وزیراعلی کے ساتھ اسٹیج پر ان کی اہلیہ ممبر پارلیمنٹ ڈمپل یادو اور ٹوئٹر انڈیا کے گلوبل وائس پریسیڈنٹ کاولن کراویل بھی موجودتھے۔

Ads