Jadid Khabar

بنگلہ دیش میں متحد ہونے کی فراق میں دہشت گرد گروپ

Thumb

نئی دہلی / ڈھاکہ، 8 (یواین آئی) بنگلہ دیش میں دو جہادی گروپ -'جماعت المجاہدین بنگلہ دیش '(جے ایم بی) اور 'انصارالاسلام 'کے ساتھ کچھ دوسرے چھوٹے گروپ اس سال ہونے والے عام انتخابات سے پہلے اپنی سرگرمیوں کو بڑھانے کے لئے متحد ہونے کی فراق میں ہیں۔بنگلہ دیش کے دارالحکومت ڈھاکہ اور یہاں کی رپورٹوں کے مطابق دہشت گرد مقبول اور ترقی پسند عوامی لیگ کے لیڈروں، سیکورٹی حکام، انتظامیہ کے حکام، آزاد بلاگرز اور ترقیاتی کاموں کے منصوبوں میں لگے غیر ملکیوں کو کو اپنا نشانہ بنا سکتے ہیں۔حکومت ہندوستان کے ذرائع نے بتایا بنگلہ دیش میں دہشت گرد گروپوں کو توسیع دینے کا منصوبہ خاص طور سے گھریلو سیاسی سرگرمیوں میں شامل ہونا ہے ۔ اس میں خاص طور پر خالدہ ضیاء کی بنگلہ دیش نیشنلسٹ پارٹی (بی این پی) کے بدعنوانی کے مقدمات میں ملوث ہونے کی بعد ان کی پارٹی حاشیہ پر چلی گئی ہے ۔ڈھاکہ سے شائع ہونے والا انگریزی اخبار 'دی ڈیلی اسٹار' کی ایک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ انٹیلی جنس محکمہ نے وزارت داخلہ کو اس سلسلہ میں متنبہ کرتے ہوئے کہا کہ انتخابات سے پہلے ملک میں افراتفری کی صورت حال پیدا کرنے کے لئے انتہا پسند جہادی گروپ ایک پلیٹ فارم پر آنے کی فراق میں ہیں۔خفیہ محکمہ کے علاوہ ڈپٹی ڈائرکٹر جنرل محمد منیر الزماں کے حوالہ سے اخبار نے لکھتا ہے کہ' خطرہ ہے اور ہم لوگ مکمل طور پرمحتاط ہیں اور اسے لے کر تیاری زوروں پر ہے ۔رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ دہشت گرد گروپ اور اسلامک اسٹیٹ روہنگیا کی حالت زار کا حوالہ دے کر لوگوں کو متحد کرنے کیلئے اس کا استعمال کر سکتے ہیں۔

Ads