Jadid Khabar

تریپورہ میں منشیات کا بڑھتا استعمال، 8 سو سے زائد طلباء ایڈز سے متاثر

Thumb

تریپورہ سے ایڈز کنٹرول سوسائٹی کے ذریعے یہ بات سامنے آئی ہے کہ ریاست بھر میں 828 طلبا ایچ آئی وی سے متاثر ہیں۔ ان متاثر طلبہ میں سے 572 طلبہ ابھی زندہ ہیں  جبکہ 47 کی اس خطرناک وائرس کی وجہ سے موت ہو گئی ہے۔ ایچ آئی وی سے متعلق یہ رپورٹ سامنے آنے کے بعد ریاست بھر میں تشویش کی لہر دوڑ گئی ہے۔

اس رپورٹ کے سامنے آنے کے بعد تریپورہ حکومت نے وضاحت جاری کرتے ہوئے کہا کہ یہ اعداد و شمار 25 سال کے ہیں۔ نیوز پورٹل ’نیوز 18‘ کی رپورٹ کے مطابق ایچ آئی وی سے متاثرہ کئی طالب علم ملک کی مختلف ریاستوں کی یونیورسٹیوں یا بڑے کالجوں میں داخلہ لے کر تعلیم حاصل کر رہے ہیں۔ تریپورہ حکومت نے ایک وضاحت جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ تریپورہ اسٹیٹ ایڈز کنٹرول سوسائٹی (ٹی ایس اے سی ایس) نے اپریل 1999 سے اپنا سفر شروع کیا تھا۔ اس سوسائٹی کے مطابق تریپورہ میں 1999 سے اب تک 828 طلباء ایچ آئی وی پازیٹیو پائے گئے ہیں، جن میں سے 572 طلباء اب بھی زندہ ہیں، جب کہ 47 اپنی جان گنوا چکے ہیں۔
دریں اثنا تریپورہ ایڈز کنٹرول سوسائٹی  کے عہدیداروں کا کہنا ہے کہ ایچ آئی وی کے معاملات میں اضافہ طلباء میں منشیات کے استعمال کی وجہ سے ہوسکتا ہے۔ ٹی ایس اے سی ایس نے تقریباً 220 اسکولوں اور 24 کالجوں اور یونیورسٹیوں میں ایسے طلباء کی نشاندہی کی ہے جو منشیات کا انجیکشن لیتے ہیں۔ ٹی ایس اے سی ایس کے جوائنٹ ڈائریکٹر نے کہا ہے کہ ہم نے ریاست بھر سے کل 164 ہیلتھ سینٹرس سے ڈیٹا یکجا کیا ہے۔ انہوں نے مزید کہا ہے زیادہ تر معاملات میں امیر گھرانوں کے بچے ایچ آئی وی سے متاثر پائے جاتے ہیں۔ حالانکہ ایسے گھرانے بھی ہیں جہاں والدین سرکاری نوکریوں پر ہیں اور وہ بچوں کے مطالبات کو پورا کرنے میں کوئی دقیقہ فروگزاشت نہیں کرتے۔ جب انہیں یہ احساس ہوتا ہے کہ ان کے بچے منشیات کا شکار ہو چکے ہیں، تب تک بہت دیر ہو چکی ہوتی ہے۔