Jadid Khabar

جموں وکشمیر میں براہ راست دلی کا راج چل رہاہے:عمر عبداللہ

Thumb

سری نگر،15مئی(یو این آئی) جموں کشمیر نیشنل کانفرنس نائب صدر اور شمالی کشمیر بارہمولہ نشست کیلئے پارٹی اُمیدوار عمر عبداللہ نے بدھ کو کہا کہ یہاں کے عوام کو انصاف دلانے کی جدوجہد آسان نہیں ہے اور یہ لڑائی ہم اکیلے نہیں لڑ سکتے ہیں، اس کیلئے عوام کے بھر پور تعاون اور اشتراک کی ضرورت ہے۔
انہوں نے کہاکہ موجودہ پارلیمانی انتخابات سیمی فائل اور آنے والے اسمبلی چناو فائنل ہونگے۔ان باتوں کا اظہار عمر عبداللہ نے ٹنگمرگ میں چناوی جلسے سے خطاب کے دوران کیا۔
 عمر عبداللہ نے کہاکہ ہم جب بات کرتے ہی تو کسی ایک کی بات نہیں کرتے ہیں، ہم جب کوئی کام کرتے ہیں تو کسی ایک مخصوص طبقہ یا علاقے کیلئے نہیں کرتے ہیں، ہم جوبھی کرتے ہیں ہر ایک کیلئے کرتے ہیں۔
انہوں نے کہاکہ ہم نے جب یہاں نئے انتظامی یونٹ بنائے ہم نے ہر ایک جگہ پر نئی نیابتیں بنائیں، نئی تحصیلیں بنائی ں، نئے بلاک بنائے۔ جب میں نے اپنے دورِ حکومت میں ویری فکیشن کے بلیک لسٹ کو ختم کرنے کا فیصلہ لیا تو وہ کسی ایک مخصوص طبقہ کیلئے نہیں تھا بلکہ جموں وکشمیر کے ہر ایک باشندے کیلئے تھا۔
ان کے مطابق ہمارا موقف تھا کہ ملی ٹینٹ کا بیٹا یا رشتہ دار ملی ٹینٹ نہیں ہے اور کسی بھی فرد کو کسی دوسرے فرد کی غلطی کی سزا نہیں ملنی چاہئے اور ہم نے نوجوانوں کی ویری فکیشن کا عمل آسان بنا یا لیکن آج یہ بلیک لسٹ کا سلسلہ پھر شروع ہوگیا، آج تو اُس بچے کی ویری فکیشن بھی نہیں ہوتی جس کا کوئی دور کا رشتہ دار 1990میں ملی ٹینٹ تھا ، جب یہ بچہ پیدا نہیں ہوا تھا اور اس وجہ سے یہ بچے نہ نوکری حاصل کرسکتے ہیں، نہ پاسپورٹ حاصل کرسکتے ہیں اور نہ بینکوں سے قرضے لے سکتے ہیں۔
 انہوں نے کہا کہ آج ہمارے ہزاروں نوجوان باہری جیلوں میں قید ہیں اور اُن میں سے بیشتر ایسے ہیں جن کیخلاف کوئی ٹھوس کیس بھی نہیں ہے، ہم جب بات کریں گے تو ان ہزاروں نوجوانوں کی بات کریں گے، ہمارا لڑائی تب پوری ہوگی جب ہم ان تمام نوجوانوں کو یہاں واپس لائیں گے اور ان کے کیسوں کا جائزہ لیکر ان کی رہائی کا کام کریں گے۔ لیکن اس کیلئے ہمیں پہلے سیمی فائنل اور پھر فائنل میں کمربستہ ہوکر اس ہل والے نشان کو کامیاب بنانا ہے، موجودہ پارلیمانی انتخابات سیمی فائنل اور آنے والے اسمبلی انتخابات فائنل ہونگے۔
 عمرعبداللہ نے کہا کہ آج ہماری آواز کو دبائی جارہاہے، 2018کے بعد یہاں براہ راست دلی کا راج چل رہاہے، حکمرانی اور حکومتی فیصلوں میں یہاں کے عوام کی رائے شاملِ حال نہیں۔ یہاں کے عوام کے فیصلے وہ لے رہے ہیں جو نہ کی زمینی صورتحال سے واقف ہیں، نہ یہاں کی جغرافیائی حالات سے واقف نہیں اور نہ ہی کے عوام کی زبان سمجھتے ہیں۔
 انہوں نے کہا کہ دفعہ370اور 35اے کے خاتمے کے بعد بڑے بڑے اعلانات کئے گئے لیکن یہاں کے عوام کو کچھ نہیں ملا۔ نوجوانوں سے جس روزگارکے وعدے کئے گئے وہ اب باہری اُمیدواروں کو دیا جارہاہے، آپ کسی بھی دفتر میں جائے وہاں آپ کو صرف باہر کے لوگ نظر آئیں گے۔
 یہاں کے لوگوں کو پریشانی، مصائب اور مشکلات کے سوال کچھ نہیں ملا۔ ”ہمیں کالج نہیں ملے، ہمیں سکول نہیں ملے، ہمیں ہسپتال نہیں ملے، ہمیں نوکریاں نہیں ملیں،یہاں کوئی نیا کارخانہ نہیں کھلا، کوئی نئی فیکٹری نہیں لگی، لیکن شراب کی دکانیں جگہ جگہ کھلیں اور پھر یہ لوگ دعویٰ کرتے ہیں کہ یہاں لوگ مطمئن اور خوش ہیں۔
عمر عبداللہ نے کہاکہ یہ لوگ یہاں شراب ایسے فروخت رہے ہیں جیسے پانی تقسیم کررہے ہیں، میں اُس وقت حیران ہوا جب میں نے سنا کہ کپوارہ میں ایک شراب کی دکان دن میں 4سے5لاکھ کی کمائی کرتی ہے جبکہ ایک عام دکاندار ایک ہزار ، دوہزار یا 3ہزار سے زیادہ نہیں کماتا، یہ حال کرکے رکھ دیا گیا ہمارا، ہمارے بچوں کو منشیات اور شراب کے بغیر کچھ نہیں دیا جارہاہے“۔